67

*ملتا نہیں ہے گوہر _ نام و نشان _ خاک مقدور بھر تو چھان چکا ہوں جہان _ خاک*

Spread the love

*غزل*

ملتا نہیں ہے گوہر _ نام و نشان _ خاک
مقدور بھر تو چھان چکا ہوں جہان _ خاک

پھر مجھ کو دشت دشت پھراتی رہی ہوا
ایسا ہوا میں شامل _ وابستگان _ خاک

سب خاک ہے تو خاک کا ہونا فضول تھا
پھر خاک داں ميں کس لۓ کھولی دکان _ خاک

اٹھ جائيں تو فلک کو اٹھا کر پرے کریں
تیری نظر ميں خاک ہیں افتادگان _ خاک

ہم کو نہ آسمان _ تہ _ خاک سے ڈرا
ہم لوگ تو ابھی سے ہیں آسودگان _ خاک

ہم سے ہر ایک آن ہے اس کا مکالمہ
ہم خاک زادگاں سے سنو داستان _ خاک

یہ کائنات خواب ہے کہ وہ جہاں خیال
کچھ تو مجھے جواب دو اے خفتگان _ خاک

ہم پر نہیں تو کس پہ کھلیں گے زمیں کے بھید
خاکی سے بڑھ کے کون ہوا رازدان _ خاک

نقش _ قدم حضورۖ کے یاں بھی وہاں بھی ہیں
اک خاک _ آسمان ہے اک آسمان _ خاک

لپٹا ہوا ہے آستاں سے جھلملیں غبار
اک نور نے لپیٹ دیا ارمغان _ خاک

نیّر نواۓ حرف تو مٹی کی چیخ تھی
پندار _ فن کی بات ہے گویا گمان _ خاک

شہزاد نیر

کیٹاگری میں : غزل

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں