28

*_اک میں ھی نہیں ان پر قربان زمانہ ھے_* *_جو ربِ دوعالم کا محبوب یگانہ ھے_* نعت شریف*

Spread the love

*_.. .۔ ۔ نعت شریف۔ ۔۔ ۔۔_*

*_اک میں ھی نہیں ان پر قربان زمانہ ھے_*
*_جو ربِ دوعالم کا محبوب یگانہ ھے_*

_کل جس نے ھمیں پُل سے خود پار لگانا ھے_
_زہرہ کا وہ بابا ھے ، سبطین کا نانا ھے_

_اس ہاشمی دولہا پر کونین کو میں واروں_
_جو حسن و شمائل میں یکتائے زمانہ ھے_

_عزت سے نہ مر جائیں کیوں نام محمّد پر_
_ھم نے کسی دن یوں بھی دنیا سے تو جانا ھے_

_آؤ درِ زہرہ پر پھیلائے ھُوئے دامن_
_ھے نسل کریموں کی، لجپال گھرانا ھے_

_ھُوں شاہِ مدینہ کی میں پشت پناھی میں_
_کیا اس کی مجھے پروا دشمن جو زمانہ ھے_

_یہ کہہ کر درِ حق سے لی موت میں کچھ مُہلت_
_میلاد کی آمد ھے، محفل کو سجانا ھے_

_قربان اُس آقا پر کل حشر کے دن جس نے_
_اِس امت آسی کو کملی میں چھپانا ھے_

_سو بار اگر توبہ ٹوٹی بھی تو کیا حیرت_
_بخشش کی روایت میں توبہ تو بہانہ ھے_

_پُر نور سی راہیں بھی گنبد پہ نگاہیں بھی_
_جلوے بھی انوکھے ہیں منظر بھی سہانا ھے_

_ھم کیوں نہ کہیں اُن سے رودادِ الم اپنی_
_جب اُن کا کہا خود بھی اللہ نے مانا ھے_

_محرومِ کرم اس کو رکھئے نہ سرِ محشر_
_جیسا ھے “نصیر” آخر سائل تو پرانا ھے_
کلام:
تاجدارِ گولڑہ پیر سید نصیر الدّین نصیرگیلانی رحمتہ اللّہ تعالیٰ علیہ

کیٹاگری میں : نعت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں