59

آشناؔ دل گر اُسے یاد نہیں کر سکتا پسلیاں توڑ کے آزاد نہیں کر سکتا ؟

Spread the love

غزل

آشناؔ دل گر اُسے یاد نہیں کر سکتا
پسلیاں توڑ کے آزاد نہیں کر سکتا ؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تجربے ، درد کی شدت پہ کیے ہیں ورنہ
میں تو اک شعر بھی ایجاد نہیں کر سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیمرے سامنے خیرات بہت بانٹتا ہے
کیمرے پیچھے جو امداد نہیں کر سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ جو پر کاٹ کے کہتا ہے، رِہا کرتا ہوں
صاف کہہ دیتا کہ آزاد نہیں کر سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے شاگرد کا شاگرد جو کرسکتا ہے
تیرے استاد کا استاد نہیں کر سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں ترے عشقِ مجازی میں خدا بھول گیا
تُو مجھے اور تو برباد نہیں کر سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

احمد آشنا ؔ

کیٹاگری میں : غزل

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں